اسرائیلی عدالت نے فلسطینی نوجوان کا قاتل یہودی رہا کر دیا

عبرانی چینل 7 نے رپورٹ کیا کہ "جج ینیو بوکر نے ملزم آباد کار کی مشروط رہائی کا حکم جاری کیا۔

فاران: مقبوضہ شہر عسقلان میں اسرائیلی عدالت نے چند روز قبل فلسطینی نوجوان علی حرب کو چھرا گھونپنے والے آباد کار کو منگل کی شام رہا کر دیا۔

عبرانی چینل 7 نے رپورٹ کیا کہ “جج ینیو بوکر نے ملزم آباد کار کی مشروط رہائی کا حکم جاری کیا۔

چینل نے مزید کہا کہ “رہائی کی شرائط میں سے 8 دن کے لیے گھر میں نظر بندی اور کیس میں دیگر مشتبہ افراد کے ساتھ بات چیت کی روک تھام شامل ہے۔

چینل نے شمالی مغربی کنارے میں بستیوں کے اہلکار”، یوسی ڈگن کے حوالے سے کہا کہ پہلے تو اسے گرفتار کرنا درست نہیں تھا اور اس نے اپنی جان اور 20 دیگر افراد کی جانوں کا دفاع کیا۔ بعد میں وہ گرفتار ہوا۔ اس پر تخریب کاروں کے ایک گروپ نے حملہ کیا تھا۔

عبرانی اخبارہارٹز نے منگل کو بتایا کہ ایک “سینیر پولیس افسر” کا کہنا ہے کہ آباد کار کے خلاف شبہ لاپرواہی اور قتل میں تبدیل ہو جائے گا۔ ایک ایسا جرم جس کی زیادہ سے زیادہ سزا 12 سال قید ہے۔

خیال رہے کہ 27 سالہ علی حرب کو 21 جون کو شمالی مقبوضہ مغربی کنارے کے علاقے سلفیت کے گاؤں “اسکاکا” میں آباد کاروں کے چاقو سے براہ راست دل پر وار کرنے کے بعد اس وقت شہید کر دیا گیا جب وہ اپنی زمین پر تھے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۴۲