اسماعیل ھنیہ کی قیادت میں حماس کے وفد کی امیر قطر سے ملاقات

اسماعیل ھنیہ نے امیر قطر کوغزہ کی تازہ صورت حال بالخصوص معاشی پابندیوں کے باعث شہریوں کو درپیش مشکلات سے تفصیل سے آگاہ کیا۔

فاران: اسلامی تحریک مزاحمت (حماس) کے سیاسی شعبے کے سربراہ اسماعیل ھنیہ جماعت کے اعلیٰ اختیاراتی وفد کے ہمراہ گذشتہ روز امیر قطر الشیخ حمد بن خلیفہ آل ثانی سے ملاقات کی ہے۔ ملاقات کے دوران فلسطین کی موجودہ صورتحال، غزہ کی پٹی میں اسرائیل کی معاشی ناکہ بندی، بیت المقدس اور مغربی کنارے میں یہودی بستیوں کی تعمیر اور عرب ممالک کی طرف سے اسرائیل کے ساتھ تعلقات استوار کرنے کے حوالے سے ہونے والی پیش رفت پر تبادلہ خیال کیا۔ ملاقات میں حماس کے بیرون ملک امور کے سربراہ خالد مشعل، موسیٰ ابو مرزوق اور حسام بدران شامل تھے۔

اسماعیل ھنیہ نے امیر قطر کوغزہ کی تازہ صورت حال بالخصوص معاشی پابندیوں کے باعث شہریوں کو درپیش مشکلات سے تفصیل سے آگاہ کیا۔ اسماعیل ھنیئہ نے بتایا کہ اسرائیل کی جانب سے مسلط کی گئی جنگوں  کے نتیجے میں غزہ کی پٹی پر انفرا اسٹرکچربری طرح تباہ ہو گیا تھا۔

انہوں نے امیر قطر کو فلسطینیوں کے مابین مفاہمت کے سلسلے میں کی جانے والی مساعی سے بھی آگاہ کیا۔ انہوں نے بتایا کہ قابض اسرائیلی حکومت کی جانب سے بیت المقدس کو یہودیت میں تبدیل کرنے کے منظم منصوبے پرکام جاری ہے جس سے شہر کی اسلامی شناخت اور تاریخی تشخص بری طرح مجروح ہو رہا ہے۔ دونوں رہ نماؤں کے مابین عرب ممالک میں جاری انقلابی تحریک اور اس کے مسئلہ فلسطین پر اثرات پر بھی بات چیت کی گئی۔

امیر قطر شیخ حمد بن خلیفہ آل ثانی نے وزیراعظم کو یقین دلایا کہ ان کی حکومت فلسطینیوں کی مدد جاری رکھے گی۔ انہوں نے غزہ کی معاشی ناکہ بندی، بیت المقدس  اور مغربی کنارے میں یہودی آباد کاری اور فلسطینیوں کی بے دخلی پراسرائیل کی شدید مذمت کی۔