درجنوں اسرائیلی فوجی فوڈ پوائزننگ کا شکار

صیہونی حکومت کے ایک فوجی اڈے میں درجنوں صیہونی فوجی فوڈ پوائزننگ کا شکار ہو گئے ہیں۔

فاران: صیہونی حکومت کے ذرائع ابلاغ نے ایک فوجی اڈے میں درجنوں فوجیوں کے فوڈ پوائزننگ کا شکار ہونے کی خبر دی ہے۔

صیہونی حکومت کے ذرائع ابلاغ نے رپورٹ دی ہے کہ گزشتہ ہفتے کے اواخر میں 75 فوجیوں کو “ناحال” بریگیڈ سے وابستہ تربیتی اڈے میں فوڈ پوائزننگ کا سامنا کرنا پڑا۔

عبرانی ویب سائٹ “واللا” نے اطلاع دی ہے کہ اس اڈے کے فوجی کھانے کے بعد فوڈ پوائزننگ اور اس کے نتیجے میں پیدا ہونے والی پیچیدگیوں کا شکار ہوئے اور انہوں نے ڈاکٹر سے ملنے کی درخواست کی۔

اس نیوز ویب سائٹ نے مزید کہا کہ صیہونی فوجیوں کے فوڈ پوائزننگ کا شکار ہونے کی وجہ بوسیدہ کھانا یا کھانے کے دوران صفائی کا خیال نہ رکھنا تھا۔

اس حوالے سے ان فوجیوں کے اہل خانہ نے مناسب طبی سہولیات کی عدم دستیابی اور ان کے بچوں کے علاج کے طریقہ کار پر بھی تنقید کی اور کہا کہ زیادہ تر فوجیوں کا معائنہ صرف ایک ڈاکٹر سے کیا گیا اور ان کے جسمانی درجہ حرارت اور بلڈ پریشر کی پیمائش کو ہی کافی سمجھا گیا۔

المنار نیٹ ورک کی رپورٹ کے مطابق صہیونی فوج کے ترجمان نے یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ گزشتہ ہفتے کے آخر میں تقریباً 75 فوجیوں نے ناحال اڈے پر پیٹ میں درد کی شکایت کی تھی اور ان کا مناسب علاج کیا گیا تھا، اس معاملے کی تفتیش جاری ہے۔