قائدین کا قتل بیت المقدس تک کا راستہ نہیں توڑ سکتا: اسلامی جہاد تنظیم

اسلامی جہاد نے زور دے کر کہا کہ قائدین کا قتل شہداء کے خون سے بیت المقدس تک کا راستہ نہیں توڑ سکتا اور جنین بریگیڈ آج جس طاقت تک پہنچی ہے وہ اس کے کردار کی عظمت کا ثبوت ہے جس کی بنیاد شہداء نے رکھی تھی۔

فاران: فلسطین میں اسلامی جہاد نے کہا ہے کہ جنین بریگیڈ کے قیام کے بعد کمانڈر جمیل محمود العموری کے اسرائیلی فوج کے ہاتھوں شہید ہونے سے مقبوضہ مغربی کنارے اور جنین میں اسرائیلی دشمن کے ساتھ مزاحمت اور جھڑپوں کے دوران ایک نئی شروعات ہو گی۔

مرکز اطلاعات فلسطین کی طرف سے موصول ہونے والے ایک بیان میں اسلامی جہاد نے زور دے کر کہا ہے کہ العموری کی شہادت سے تصادم کا سلسلہ نہیں رکے گا۔ العموری نے اپنے خون سے دشمن کو یہ پیغام دیا ہے کہ فلسطینی قوم آزادی کے لیے جانوں کے نذرانے دیتی رہے گی۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ فلسطینی قوم کو نوجوانوں کی شہادتوں پر افسوس نہیں بلکہ شہدا کا خون تحریک آزادی کو ایک نئی طاقت دیتا ہے۔

اسلامی جہاد نے زور دے کر کہا کہ قائدین کا قتل شہداء کے خون سے بیت المقدس تک کا راستہ نہیں توڑ سکتا اور جنین بریگیڈ آج جس طاقت تک پہنچی ہے وہ اس کے کردار کی عظمت کا ثبوت ہے جس کی بنیاد شہداء نے رکھی تھی۔ اس بریگیڈ میں عموری، عبداللہ الحصری، احمد السعدی، امجد الفائد اور دیگر قیدی اور مجاہدین شامل ہیں۔

اسلامی جہاد نے کہا کہ ہم اپنے صالح شہداء اور ان کے معزز خاندانوں کو سلام پیش کرتے ہیں۔ ہم ان سے عہد کرتے ہیں کہ فتح تک ان کے پاک خون کا احترام کریں گے۔ ہم اپنے بہادر قیدیوں کو ثابت قدمی اور دفاع کا سلام بھیجتے ہیں اور ہم ان سے عہد کرتے ہیں کہ ہم ان کو اس وقت تک ترک نہیں کریں گے جب تک ہم آزادی حاصل نہیں کرلیتے۔