کل 1963 آج 4
  • مطابق با: Monday - 15 - August - 2022
  • بایگانی‌های انٹرویو - فاران

    یہود و نصاریٰ کے ساتھ سیاسی تعلقات قرآن کریم کی رو سے

    یہود و نصاریٰ کے ساتھ سیاسی تعلقات قرآن کریم کی رو سے

    آیت نے کھلے الفاظ میں کہہ دیا ہے کہ یہود و نصاریٰ کو اپنا دوست اور سرپرست نہ بناو یعنی ان کے ساتھ معاملات میں خود کو کمزور مت سمجھو، البتہ آیت یہ نہیں کہتی کہ یہود و نصاریٰ کے ساتھ گفتگو اور مذاکرات نہ کرو، ان کے ساتھ بالکل تعلقات نہ رکھو، بلکہ آیت میں تاکید اس بات پر ہے کہ ان کے مقابلے میں خود کو ضعیف مت سمجھو ۔

    ایران اور سعودی عرب تعلقات کی کیا اہمیت ہے؟ / ترکی اور اسرائیل کے تعلقات کیوں ناکامی کا شکار ہوں گے؟

    ایران اور سعودی عرب تعلقات کی کیا اہمیت ہے؟ / ترکی اور اسرائیل کے تعلقات کیوں ناکامی کا شکار ہوں گے؟

    صہیونی ریاست پوری دنیا پر یہودی نسلی برتری کے تصور پر استوار ہے، وہ نیل سے فرات تک کے علاقے کو اپنی ملکیت سمجھتی ہے؛ اور اس صورت میں دوستی اور برابر کے تعلق کا تصور ہی ممکن نہیں چنانچہ زور زبردستی کے ذریعے آقا اور غلام کا تعلق ہی قائم ہو سکتا ہے

    ناجائز اسرائیلی ریاست خطے کے ممالک کے ساتھ گہرا تعلق قائم کرنے سے عاجز کیوں؟

    ناجائز اسرائیلی ریاست خطے کے ممالک کے ساتھ گہرا تعلق قائم کرنے سے عاجز کیوں؟

    حالیہ مہینوں میں مغربی ایشیا میں بڑی تبدیلیاں آئی ہیں۔ ایک طرف سے عرب ممالک ایران کے ساتھ بہتر تعلقات کے خواہاں ہیں اور دوسری طرف سے مغربی سفارتکار ایران کے ساتھ ایٹمی معاہدے کے احیاء میں حائل رکاوٹیں ہٹنے کی آس لگائے بیٹھے ہیں؛ جس کی وجہ سے تل ابیب کی جعلی ریاست کو تشویش لاحق ہوئی ہے اور اس نے "ابراہیمی امن منصوبے" نامی سازش کے نفاذ کو ملتوی کر دیا ہے۔

    مغربی ایشیا کے دورے سے بائڈن کے مقاصد حاصل ہونا آسان نہیں
    ڈاکٹر فؤاد ایزدی:

    مغربی ایشیا کے دورے سے بائڈن کے مقاصد حاصل ہونا آسان نہیں

    عرب کٹھ پتلیاں اس حقیقت کے ادراک سے عاجز ہیں کہ صہیونیوں کو سنجیدہ چیلنجوں کا سامنا ہے اور اپنے امن کے تحفظ سے بھی بالکل بے بس ہیں، اسے خود بیرونی امداد کی ضرورت ہے، اور قطعی طور پر وہ کسی اور کی حمایت نہیں کر سکتا اور گرتا گرتے کا سہارا نہیں لیتا اور گرتا گرتے کی مدد نہیں کرسکتا۔

    کیا امریکہ اسرائیل کی نابودی کے اسباب فراہم کر رہا ہے؟

    کیا امریکہ اسرائیل کی نابودی کے اسباب فراہم کر رہا ہے؟

    ان تمام حالات اور مراحل کا حاصل یہ ہے کہ ایک طرف سے اسلامی مقاومت کے طاقتور ہونے کے ساتھ اسرائیل کی فیصلہ کن بیرونی مخالفت سامنے آتی ہے اور دوسری طرف سے صہیونی ریاست کے اندر بھی بہت سارے عوامل و اسباب ہیں جو اسے اندر سے منہدم کر رہے ہیں؛ خواہ بیرونی عوامل نہ بھی ہوں؛ تیسری طرف سے اسرائیل کو تقویت پہنچانے والے عناصر زوال پذیر ہوچکے ہیں۔

    صہیونی ریاست کے اندر ایسے کیا عوامل ہیں جو اس کی فنا کی رفتار کو تیز تر کر رہے ہیں؟

    صہیونی ریاست کے اندر ایسے کیا عوامل ہیں جو اس کی فنا کی رفتار کو تیز تر کر رہے ہیں؟

    دنیا کے یہودیوں کی طرف سے صہیونی نظریئے کی منظم مخالفت کی لہر میں شدت اور مسلسل وسعت آ رہی ہے، اور فلسطین میں اسرائیلی ریاست کی تشکیل، یہودی مذہبی اصولوں سے مطابقت نہیں رکھتی، چنانچہ یہ مسئلہ بھی اسرائیل کے لئے ایک بڑا مسئلہ بن گیا ہے۔

    ‘قضیہ فلسطین’ پر عرب ممالک کی رائے مشترک ہے: ہنیہ

    ‘قضیہ فلسطین’ پر عرب ممالک کی رائے مشترک ہے: ہنیہ

    اسماعیل ہنیہ نے کہا '' الجیریا خاموش اور دانشمندانہ سفارت کاری کے ذریعے 'فلسطین کاز' پر کردار ادا کر رہا ہے۔ اس مقصد کے لیے عرب رہنماوں کے ساتھ بار بار میٹنگز کر رہا ہے تاکہ عرب ایشو ز پر بالعموم اور 'فلسطین کاز' پر بطور خاص عرب سربراہ کانفرنس کا انعقاد ممکن بناسکے۔''

    خطے میں اسلامی بیداری کی تحریکوں نے مقاومت اور مسئلہ فلسطین پر کیا اثرات مرتب کئے ہیں؟

    خطے میں اسلامی بیداری کی تحریکوں نے مقاومت اور مسئلہ فلسطین پر کیا اثرات مرتب کئے ہیں؟

    ایران کے اسلامی انقلاب سے پہلے فلسطینیوں کے اتحاد کا سبب "عربیت" تھی لیکن اس کے بعد اسلام ہے جو مجاہدین کو متصل کرتا ہے، جس کا سبب یہ ہے اسلامی انقلاب اسرائیل کا دشمن ہے اور اسرائیل کے بڑے حامی (شاہ) کو نابود کر چکا ہے۔

    صہیونی ریاست کے انہدام کے اسباب/ اسرائیل کے زوال میں مقاومت کا کردار

    صہیونی ریاست کے انہدام کے اسباب/ اسرائیل کے زوال میں مقاومت کا کردار

    تمام تر فلسطینی مردوں اور خواتین کا غاصبوں اور قابضوں کے مقابلے میں میدان میں آنا - جو مستقبل میں جدوجہد اور مقاومت کی مزید وسعت اور طاقت کا موجب ہے - بھی صہیونیوں کے زوال کے امکانات کو تقویت پہنچا رہا ہے۔

    اوپر جاؤ